حسینہ معین کی تحریر ۱ور مصباح اسحاق خالد کی ہدایت کاری میں بننے والی ویب سیریز ‘ابھی نہیں ‘ اپریل 2021 میں رنسٹرا پر دستیاب ہوگی۔ میڈیا کو بریفنگ دینے کے لئے پریس ایونٹ اسلام آباد میں منعقد ہوا جس میں کاسٹ، مصنفہ اور سیریز کی ہدایتکارہ نے شرکت کی۔ ابھی نہیں کی کہانی، معاشرے میں چھاتی کے سرطان کے داغ کو دور کرتے ہوئے، ”بیماری میں یا صحت میں ” کے موضوع پر مبنی ہے، جس میں یہ دکھایا گیا ہے کہ انسان کیسے محبت اور عزم کے ذریعے اس کا مقابلہ کرسکتا ہے۔ سینارا (ڈرامے کاا مرکزی کردار) ندا کریم کا جذباتی سفر چھاتی کے کینسر سے لڑنے کے دوران کیسے اہم تبدیلی لائی۔
اپنے دور کی سب سے مشہور مصنفہ، حسینہ معین نے کہا، ”میں خود ہی کینسر سے بچ کر آئی ہوں اور جب رنسٹرا نے مجھ سے یہ ڈرامہ لکھنے کو کہا، تو میں اس ڈرامے میں نوجوان لڑکیوں اور ماؤں کو اس سے آگاہ کرنا چاہوں گی۔ جس کا بنیادی پیغام ہے، ‘آئیے مل کر کینسر سے لڑیں ‘۔
اپنی پہلی فلم میں کام کرنے والی ویب سیریز کی مرکزی کردار ندا کریم نے اپنے خیالات کا اظہار کرتے ہوئے کہا، ”میں ہمیشہ ایک ایسا کردار کرنا چاہتی تھی جو معنی خیز ہو اور اس میں کسی خاص پیغام کو سامنے لانے کی صلاحیت حاصل ہو۔ ابھی نہیں میں، سنارا کا کردار لچک، اور سچے پیار اور دیکھ بھال پر اعتماد کا پیغام دینے میں کامیاب رہا ہے۔ یہ وہی حقیقی اقدار ہیں جو ہمارے معاشرے اور آس پاس کے لوگوں کی عکاسی کرتی ہیں۔ مجھے یقین ہے کہ جو بھی اسے رنسٹرا پر دیکھے گا اس پر اثر ضرور کرے گا۔
گرین اسٹار کے چیف ایگزیکٹو آفیسر ڈاکٹر عزیز رب والد کا کردار ادا کررہے ہیں اور سیریز میں نعمان سمیع لیڈ ہیرو ہیں۔ نعمان سمیع ایک پاکستانی ٹیلی ویژن اور فلمی اداکار ہیں۔ نعمان سمیع، می ہار نہیں مانوں گی، دلدل، ہیلپ می دردانامیں بھی کام کر چکے ہیں۔ 2019 میں، انہوں نے تلاش کے ساتھ فلمی میدان میں قدم رکھا جسکو سراہا گیا تھا۔
رنسٹراکی چیف تخلیقی آفیسر، مصباح اسحاق خالد، جو ویب سیریز کی تیاری اور ہدایت کاری بھی کررہی ہیں، نے کہا، ”ابھی نہیں، کا موضوع میرے دل سے بہت قریب ہے، میں نے ہر ایک کردار کو، ایک جامع نقطہ نظر سے سامنے لانے کی کوشش کی ہے اور یہ دکھایا گیا ہے کہ کیسے فیملی کا ہر فرد اس سے متاثر ہوتا ہے اور وہ کس طرح اس بیماری سے مقابلہ کر سکتے ہیں۔
2021 میں، کینسر کی تمام اقسام میں سے، 28.7٪ صرف چھاتی کا کینسر تھے۔ابھی نہیں، میں پاکستان میں چھاتی کے کینسر سے آگاہی کے بدنما داغ کو مخاطب کرتے ہوئے، ویب سیریز میں اس قبول کرنے پر بھی توجہ مرکوز کی گئی ہے۔ فلم کا مرکزی کردار سنارا، بیسویں سال کی ابتدائی عمر کی ایک نوجوان لڑکی ہے جس نے آیان سے شادی کرنی تھی۔ تاہم، بیرون ملک اپنے کام کے سفر کے دوران، اسے چھاتی کے کینسر کی تشخیص ہوئی جب وہ شادی کی تیاریوں میں مصروف تھی جس کی وجہ سے وہ اس تعلق کو چھوڑنے کی کوشش کرتی ہے تاکہ وہ آیان کو اپنی بیماری سے بچائے۔ پانچ قسطوں پر مبنی کہانی کے دوران، وہ بیماری سے لڑتے ہوئے اپنے قریبی لوگوں میں اعتماد کرتی ہے۔
رنسٹرا ٹیکنالوجیز کے چیئرمین اور شریک بانی ڈاکٹر عادل اختر نے کہا، ”خود ایک آنکولوجسٹ ہونے کی وجہ سے، میرے لئے یہ بہت ضروری ہے کہ وہ پاکستانی میڈیا انڈسٹری کے لئے اس طرح کی کہانی پیش والے سنگ میل کا حصہ ہوں۔” انہوں نے مزید کہا، ”چھاتی کا کینسر دنیا بھر میں موت کی سب سے اہم وجوہ میں سے ایک ہے۔ اور ڈبلیو ایچ او کے اندازوں کے مطابق، یہ دنیا بھر میں تشخیص کردہ تمام کینسروں میں سے 10٪ کی نمائندگی کرتا ہے۔ انہوں نے کہا، ”ہمیں یقین ہے کہ” ابی نی ”سے پاکستان میں بڑے پیمانے پر آگاہی پیدا ہوگی۔ اس کوشش کے لئے ہماری توجہ ملک میں چھاتی کے سرطان کے بارے میں شعور بیدار کرنے کی ہے، جس میں پاکستان میں بریسٹ کینسر کے خطرناک حد تک واقعات بھی شامل ہیں۔ انہوں نے کہا، ”یہ بیماری بھی مہلک نہیں ہے اور قابل علاج ہے، اگر چھاتی کے معمول کے معائنے کے ذریعہ جلد ہی اس کا پتہ لگایا جا ئے تو کینسر کے بعد کی ذندگی کو بھی ویسے ہی جیا جا سکتا ہے جیسے کینسر سے پہلی کی ذندگی کو جیا جاتا ہے۔
کسی دوسرے ایشین ملک کے مقابلے میں صرف پاکستان میں ہی بریسٹ کینسر کی شرح سب سے زیادہ ہے، کیونکہ ہر سال تقریبا نوے ہزار نئے کیسز سامنے آتے ہیں، جن میں سے چالیس ہزار کی اموات ہو جاتی ہے ایک تحقیق کے مطابق، ہر 9 میں سے تقریبا 1 خاتون اپنی زندگی کے کسی بھی موقع پر اس بیماری کا شکار ہوجاتی ہیں اور 50 برس سے اوپر کی خواتین میں بریسٹ کینسر کا تقریبا ستتر فیصد ہوتا ہے، لیکن اگر ابتدائی تشخیص کی جائے تو بقا کی شرح 90٪ تک پہنچ جاتی ہے۔
خواتین کے چھاتی کے کینسر نے اب 2020 میں پھیپھڑوں کے کینسر کو عالمی سطح پر کینسر کے واقعات کی سب سے بڑی وجہ قرار دے کر پیچھے چھوڑ دیا ہے، جس میں اندازے کے مطابق 2.3 ملین نئے کیسز ہیں، جو کینسر کے تمام کیسز میں سے 11.7 فیصد کی نمائندگی کرتے ہیں۔ یہ دنیا بھر میں کینسر کی اموات کی پانچواں اہم وجہ ہے، جس سے چھ لاکھ پچاسی ہزار اموات ہیں۔ خواتین میں، چھاتی کے کینسر میں کینسر کے 4 واقعات میں سے 1 اور 6 میں سے 1 میں کینسر کے ذریعے اموات ہوتی ہیں، جو ممالک کی اکثریت (185 ممالک میں سے 159) اور 110 ممالک میں اموات کے لئے پہلے درجے پر ہیں۔
حسینہ معین پاکستان کی سب سے مشہور ڈرامہ نگار، اور اسکرپٹ رائٹر ہیں۔ انہوں نے اسٹیج، ریڈیو اور ٹیلی ویژن کے لئے متعدد ڈرامے لکھے ہیں، جن میں سے کچھ بین الاقوامی شہرت بھی حاصل کر چکے ہیں۔ انہیں پاکستان میں پرفارمنگ آرٹس میں خدمات پر پرائڈ آف پرفارمنس ایوارڈبھی ملا ہے۔ جبکہ انہیں لائف ٹائم اچیومنٹ آگاہی ایوارڈ سے بھی نوازا گیا ہے۔حسینہ معین اور مصباح اسحاق ایک اور سیریز ”دستک” بنا رہے ہیں جو ایک رومانٹک محبت کی کہانی ہوگی اور رواں سال کے آخر میں رنسٹرا پر دستیاب ہوگی۔
رنسٹرا پورے پاکستان میں نوجوان صلاحیتوں کو مواقع فراہم کررہا ہے۔ ابھی نہیں کی کاسٹنگ RINSTRA.com کی آن لائن کاسٹنگ کال کے ذریعے کی گئی تھی، جہاں دنیا بھر سے لوگوں نے اپنے آڈیشن جمع کروائے تھے۔ ایک ماہ تک ووٹنگ کا عمل جاری رہا۔ عوامی ووٹنگ اور جیوری سلیکشن کے ساتھ ہی ندا کریم اور نعمان سمیع کو سیریز میں شامل کیا گیا ہے۔

Previous articleپاکستان سے ترکی تک کاروباری ٹرین کے دوبارہ آغاز کا امکان
Next articleانتخابی مہم کا وقت ختم، سینیٹ انتخابات کیلئے میدان کل لگے گا